You are not logged in.

#1 Feb 12th 15 08:58:37

freebird
Member
Registered: Jan 9th 15
Posts: 746

قال رسول الله ﷺ

قال رسول الله ﷺ انقسمت الیھود إلی إحدی و سبعین شعبةو انقسمت النصاریٰ إلی إثنین و سبعین شعبة و سنقسم أمتی إلی ثلاثة و سبعین
-----------------------------------------------------------------------------------------------------------------------
شعبة کلھا فی النار الا واحدة۔ قالوا : ما ہی یا رسول اللہ ﷺ قال الذی علیہ أنا و صحابتی ۔

حدیث مشہور صحیح و روی فی اکثر مسانید و السنن کسنن ابوداؤد و النسائی و غیرہم۔

آپ ﷺ نے ارشاد فرمایا کہ یہود 71فرقوں میں بٹ گئے تھے اور نصاریٰ 72فرقوں میں ۔میری امت عنقریب 73فرقوں میں بٹے گی ۔یہ سب فرقے جہنمی ہوں گے سوائے ایک کے ۔صحابہ کرام  نے پوچھا یہ کونسا فرقہ ہوگا ۔ فرمایا جس پر میں ہوں اور میرے صحابہ  ہیں۔

یہ مشہور صحیح حدیث ہے اور اکثر مسانید اور سنن میں روایت کی گئی ہے۔
----------------------------------------------------------------

اس سے پتا چلا کہ صرف وہی لوگ صحیح راستہ پر رہ سکیں گے جو سنت کے اتباع کے ساتھ صحابہ کے طریقے کو ہاتھ سے نہیں جانے دیں گے۔
معلوم ہوا کہ تینوں قسم کے صحابہ اور صحابیات یعنی امہات المؤمنین ، اہل بیت طہار رضی الله عنہم و عنہن اور عام صحابہ و صحابیات رضی الله عنہم و عنہن کے متبعین تو صحیح طریقے پر ہیں ۔ان میں سے کسی ایک کے طریقے سے محرومی اتنی ہدایت سے محرومی اور کسی ایک کا بھی مخالف مکمل ہدایت سے محرومی کا سبب ہے۔ ہدایت حاصل کرنے کے لئے جب سورة فاتحہ پڑھا جاتا ہو تو اھدنا الصراط المستقیم سے آخر تک پڑھنے میں دل کو شامل رکھا جائے اور ایک مسنون دعا ہے اس کی کثرت بہت مفید ہے ۔

اللھم أرنا الحق الحق و ارزقنا إتباعہ و أرنا الباطل الباطل و ارزقنا إجتنابہ۔

آمین ۔

یعنی اے الله ہمیں حق حق دکھا دسے اور اسکی اتباع نصیب فرما اور ہمیں باطل باطل دکھا دے اور اوراس سے بچنے کی توفیق عطا فرما ۔

قارین سے ہمارے لئے بھی ہدایت کی دعا کی درخواست ہے کہ کہیں بھٹک نہ جائیں۔

Last edited by freebird (Feb 12th 15 09:07:44)

Liked by:

Board footer